آئے تھے تیرے شہر میں کتنی لگن سے ہم

حمایت علی شاعر

آئے تھے تیرے شہر میں کتنی لگن سے ہم

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    آئے تھے تیرے شہر میں کتنی لگن سے ہم

    منسوب ہو سکے نہ تری انجمن سے ہم

    بیزار آ نہ جائیں غم جان و تن سے ہم

    اپنے وطن میں رہ کے بھی ہیں بے وطن سے ہم

    یوں بے رخی سے پیش نہ آ اہل دل کے ساتھ

    اٹھ کر چلے نہ جائیں تری انجمن سے ہم

    یہ سرکشی جنوں نہیں پندار عشق ہے

    گزرے ہیں دار سے بھی اسی بانکپن سے ہم

    مہر و مہ و نجوم کی مانند روز و شب

    ہر جور آسماں پہ رہے خندہ زن سے ہم

    ملتے ہیں روز دست صبا سے پیام گل

    زنداں میں بھی قریب ہیں اہل چمن سے ہم

    شاعرؔ ادب کے محتسبوں کو خبر نہیں

    کیا کام لے رہے ہیں تغزل کے فن سے ہم

    مأخذ :
    • کتاب : Naya daur (Pg. 260)
    • Author : Qamar Sultana

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے