آگ ہے آگ تری تیغ ادا کا پانی

جوشؔ ملسیانی

آگ ہے آگ تری تیغ ادا کا پانی

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    آگ ہے آگ تری تیغ ادا کا پانی

    ایسے پانی کو میں ہرگز نہ کہوں گا پانی

    نہ رہے آنکھ میں بھی دل سے نکل کر آنسو

    جا بجا ان کو لیے پھرتا ہے دانا پانی

    حال پوچھو نہ مرے گریۂ غم کا مجھ سے

    اس کے کہنے سے بھی ہوتا ہے کلیجا پانی

    سوز غم ہی سے مری آنکھ میں آنسو آئے

    سوچتا ہوں کہ اسے آگ کہوں یا پانی

    ترک مے خانہ گوارا نہ کروں گا ہرگز

    راس ہے میری طبیعت کو یہاں کا پانی

    کر دیا سب کو ترے تیر نظر نے سیراب

    جس کے سینے پہ لگا اس نے نہ مانگا پانی

    عیش دم بھر کا بھی دیکھا نہیں جاتا اس سے

    چرخ کم بخت کی آنکھوں میں نہ اترا پانی

    تیرے ہی جلوے سے ہے باغ تمنا کی بہار

    یہی تنویر ہے آئینہ دل کا پانی

    خلش غم سے کئے جاؤں کہاں تک نالے

    میری قسمت میں تو ہر روز یہ ایذا پانی

    ڈوب جاتے ہیں امیدوں کے سفینے اس میں

    میں نہ مانوں گا کہ آنسو ہے ذرا سا پانی

    ضبط گریہ سے بڑھی اور مصیبت اے جوشؔ

    دل یہ کہتا ہے کہ اب سر سے ہے اونچا پانی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY