آغاز تو ہوتا ہے انجام نہیں ہوتا

مینا کماری ناز

آغاز تو ہوتا ہے انجام نہیں ہوتا

مینا کماری ناز

MORE BY مینا کماری ناز

    آغاز تو ہوتا ہے انجام نہیں ہوتا

    جب میری کہانی میں وہ نام نہیں ہوتا

    جب زلف کی کالک میں گھل جائے کوئی راہی

    بدنام سہی لیکن گمنام نہیں ہوتا

    ہنس ہنس کے جواں دل کے ہم کیوں نہ چنیں ٹکڑے

    ہر شخص کی قسمت میں انعام نہیں ہوتا

    دل توڑ دیا اس نے یہ کہہ کے نگاہوں سے

    پتھر سے جو ٹکرائے وہ جام نہیں ہوتا

    دن ڈوبے ہے یا ڈوبی بارات لیے کشتی

    ساحل پہ مگر کوئی کہرام نہیں ہوتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مینا کماری ناز

    مینا کماری ناز

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites