آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے

مرزا غالب

آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے

    ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے

    حسرت نے لا رکھا تری بزم خیال میں

    گلدستۂ نگاہ سویدا کہیں جسے

    پھونکا ہے کس نے گوش محبت میں اے خدا

    افسون انتظار تمنا کہیں جسے

    سر پر ہجوم درد غریبی سے ڈالیے

    وہ ایک مشت خاک کہ صحرا کہیں جسے

    ہے چشم تر میں حسرت دیدار سے نہاں

    شوق عناں گسیختہ دریا کہیں جسے

    درکار ہے شگفتن گل ہائے عیش کو

    صبح بہار پنبۂ مینا کہیں جسے

    غالبؔ برا نہ مان جو واعظ برا کہے

    ایسا بھی کوئی ہے کہ سب اچھا کہیں جسے

    یا رب ہمیں تو خواب میں بھی مت دکھائیو

    یہ محشر خیال کہ دنیا کہیں جسے

    ہے انتظار سے شرر آباد رستخیز

    مژگان کوہکن رگ خارا کہیں جسے

    کس فرصت وصال پہ ہے گل کو عندلیب

    زخم فراق خندۂ بیجا کہیں جسے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سائرہ نسیم

    سائرہ نسیم

    غلام علی

    غلام علی

    مآخذ:

    • Book: Ghair Mutdavil Kalam-e-Ghalib (Pg. 111)
    • Author: Jamal Abdul Wahid
    • مطبع: Ghalib Academy Basti Hazrat Nizamuddin,New Delhi-13 (2016)
    • اشاعت: 2016

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites