آئینے کے آخری اظہار میں

ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

آئینے کے آخری اظہار میں

ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

MORE BY ضیاء المصطفیٰ ترکؔ

    آئینے کے آخری اظہار میں

    میں بھی ہوں شام ابد آثار میں

    دیکھتے ہی دیکھتے گم ہو گئی

    روشنی بڑھتی ہوئی رفتار میں

    قطرہ قطرہ چھت سے ہی رسنے لگی

    دھوپ کا رستہ نہ تھا دیوار میں

    اپنی آنکھیں ہی میں بھول آیا کہیں

    رات اتنی بھیڑ تھی بازار میں

    بار بار آتا رہا ہے تیرا نام

    آئینہ ہوتی ہوئی گفتار میں

    دور تک بچھتی چلی جاتی تھی نیند

    خواب آتا ہی نہ تھا اظہار میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites