آج بھی دشت بلا میں نہر پر پہرا رہا

اختر سعید خان

آج بھی دشت بلا میں نہر پر پہرا رہا

اختر سعید خان

MORE BY اختر سعید خان

    آج بھی دشت بلا میں نہر پر پہرا رہا

    کتنی صدیوں بعد میں آیا مگر پیاسا رہا

    کیا فضائے صبح خنداں کیا سواد شام غم

    جس طرف دیکھا کیا میں دیر تک ہنستا رہا

    اک سلگتا آشیاں اور بجلیوں کی انجمن

    پوچھتا کس سے کہ میرے گھر میں کیا تھا کیا رہا

    زندگی کیا ایک سناٹا تھا پچھلی رات کا

    شمعیں گل ہوتی رہیں دل سے دھواں اٹھتا رہا

    قافلے پھولوں کے گزرے اس طرف سے بھی مگر

    دل کا اک گوشہ جو سونا تھا بہت سونا رہا

    تیری ان ہنستی ہوئی آنکھوں سے نسبت تھی جسے

    میری پلکوں پر وہ آنسو عمر بھر ٹھہرا رہا

    اب لہو بن کر مری آنکھوں سے بہہ جانے کو ہے

    ہاں وہی دل جو حریف جوشش دریا رہا

    کس کو فرصت تھی کہ اخترؔ دیکھتا میری طرف

    میں جہاں جس بزم میں جب تک رہا تنہا رہا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آج بھی دشت بلا میں نہر پر پہرا رہا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites