آنکھوں میں دھوپ دل میں حرارت لہو کی تھی

خالد محمود

آنکھوں میں دھوپ دل میں حرارت لہو کی تھی

خالد محمود

MORE BY خالد محمود

    آنکھوں میں دھوپ دل میں حرارت لہو کی تھی

    آتش جوان تھا تو قیامت لہو کی تھی

    زخمی ہوا بدن تو وطن یاد آ گیا

    اپنی گرہ میں ایک روایت لہو کی تھی

    خنجر چلا کے مجھ پہ بہت غم زدہ ہوا

    بھائی کے ہر سلوک میں شدت لہو کی تھی

    کوہ گراں کے سامنے شیشے کی کیا بساط

    عہد جنوں میں ساری شرارت لہو کی تھی

    رخسار و چشم و لب گل و صہبا شفق حنا

    دنیائے رنگ و بو میں تجارت لہو کی تھی

    خالدؔ ہر ایک غم میں برابر شریک تھا

    سارے جہاں کے بیچ رفاقت لہو کی تھی

    RECITATIONS

    خالد محمود

    خالد محمود

    خالد محمود

    آنکھوں میں دھوپ دل میں حرارت لہو کی تھی خالد محمود

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY