آنکھوں سے محبت کے اشارے نکل آئے

منصور عثمانی

آنکھوں سے محبت کے اشارے نکل آئے

منصور عثمانی

MORE BYمنصور عثمانی

    آنکھوں سے محبت کے اشارے نکل آئے

    برسات کے موسم میں ستارے نکل آئے

    تھا تجھ سے بچھڑ جانے کا احساس مگر اب

    جینے کے لئے اور سہارے نکل آئے

    میں نے تو یونہی ذکر وفا چھیڑ دیا تھا

    بے ساختہ کیوں اشک تمہارے نکل آئے

    جب میں نے سفینے میں ترا نام لیا ہے

    طوفان کی باہوں سے کنارے نکل آئے

    ہم جاں تو بچا لاتے مگر اپنا مقدر

    اس بھیڑ میں کچھ دوست ہمارے نکل آئے

    جگنو انہیں سمجھا تھا مگر کیا کہوں منصورؔ

    مٹھی کو جو کھولا تو شرارے نکل آئے

    مأخذ :
    • کتاب : Kashmakash (Pg. 51)
    • Author : Mansoor Usmani
    • مطبع : Najma House, Baradari, Moradabad (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY