آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا

اختر شیرانی

آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا

اختر شیرانی

MORE BY اختر شیرانی

    آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا

    کیا بتاؤں کہ مرے دل میں ہیں ارماں کیا کیا

    غم عزیزوں کا حسینوں کی جدائی دیکھی

    دیکھیں دکھلائے ابھی گردش دوراں کیا کیا

    ان کی خوشبو ہے فضاؤں میں پریشاں ہر سو

    ناز کرتی ہے ہوائے چمنستاں کیا کیا

    دشت غربت میں رلاتے ہیں ہمیں یاد آ کر

    اے وطن تیرے گل و سنبل و ریحاں کیا کیا

    اب وہ باتیں نہ وہ راتیں نہ ملاقاتیں ہیں

    محفلیں خواب کی صورت ہوئیں ویراں کیا کیا

    ہے بہار گل و لالہ مرے اشکوں کی نمود

    میری آنکھوں نے کھلائے ہیں گلستاں کیا کیا

    ہے کرم ان کے ستم کا کہ کرم بھی ہے ستم

    شکوے سن سن کے وہ ہوتے ہیں پشیماں کیا کیا

    گیسو بکھرے ہیں مرے دوش پہ کیسے کیسے

    میری آنکھوں میں ہیں آباد شبستاں کیا کیا

    وقت امداد ہے اے ہمت گستاخی شوق

    شوق انگیز ہیں ان کے لب خنداں کیا کیا

    سیر گل بھی ہے ہمیں باعث وحشت اخترؔ

    ان کی الفت میں ہوئے چاک گریباں کیا کیا

    RECITATIONS

    معین شاداب

    معین شاداب

    معین شاداب

    آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا معین شاداب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites