عاشقی جرأت اظہار تک آئے تو سہی

ایاز احمد طالب

عاشقی جرأت اظہار تک آئے تو سہی

ایاز احمد طالب

MORE BYایاز احمد طالب

    عاشقی جرأت اظہار تک آئے تو سہی

    وہ ذرا خوف جہاں دل سے مٹائے تو سہی

    کیسے اٹھتے ہیں قدم دیکھیے منزل کی طرف

    دل کے ارشاد پہ سر کوئی جھکائے تو سہی

    اس کے قدموں میں رفاقت کے خزانے ہوں گے

    میری جانب وہ قدم اپنے بڑھائے تو سہی

    جذبۂ جوش محبت تجھے سو بار سلام

    میری آہٹ پہ وہ دہلیز تک آئے تو سہی

    ہر غزل میری قصیدہ ہی سہی تیرا مگر

    تجھ کو اشعار میں یوں کوئی سجائے تو سہی

    داستاں ہوں گے خود اس اجڑے ہوئے شہر کے غم

    اس اندھیرے میں کوئی شمع جلائے تو سہی

    خود بخود راستہ دے گا یہ زمانہ طالبؔ

    دوستی کے لئے وہ ہاتھ بڑھائے تو سہی

    مآخذ :
    • کتاب : Almaas (Pg. 54)
    • Author : Ayaz Ahmad Talib
    • مطبع : Ayaz Ahmad Talib (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY