آتے ہی تو نے گھر کے پھر جانے کی سنائی

شیخ ابراہیم ذوقؔ

آتے ہی تو نے گھر کے پھر جانے کی سنائی

شیخ ابراہیم ذوقؔ

MORE BY شیخ ابراہیم ذوقؔ

    آتے ہی تو نے گھر کے پھر جانے کی سنائی

    رہ جاؤں سن نہ کیونکر یہ تو بری سنائی

    مجنوں و کوہ کن کے سنتے تھے یار قصے

    جب تک کہانی ہم نے اپنی نہ تھی سنائی

    شکوہ کیا جو ہم نے گالی کا آج اس سے

    شکوے کے ساتھ اس نے اک اور بھی سنائی

    کچھ کہہ رہا ہے ناصح کیا جانے کیا کہے گا

    دیتا نہیں مجھے تو اے بے خودی سنائی

    کہنے نہ پائے اس سے ساری حقیقت اک دن

    آدھی کبھی سنائی آدھی کبھی سنائی

    صورت دکھائے اپنی دیکھیں وہ کس طرح سے

    آواز بھی نہ ہم کو جس نے کبھی سنائی

    قیمت میں جنس دل کی مانگا جو ذوقؔ بوسہ

    کیا کیا نہ اس نے ہم کو کھوٹی کھری سنائی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آتے ہی تو نے گھر کے پھر جانے کی سنائی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites