آٹھوں پہر لہو میں نہایا کرے کوئی

فضیل جعفری

آٹھوں پہر لہو میں نہایا کرے کوئی

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    آٹھوں پہر لہو میں نہایا کرے کوئی

    یوں بھی نہ اپنے درد کو دریا کرے کوئی

    اڑ جائے گی فصیل شب جبر توڑ کر

    قیدی نہیں ہوا جسے اندھا کرے کوئی

    دل تختۂ گلاب بھی آتش فشاں بھی ہے

    اس رہگزر سے روز نہ گزرا کرے کوئی

    اوڑھی ہے اس نے سرد خموشی مثال سنگ

    لفظوں کے آبشار گرایا کرے کوئی

    پانی کی طرح پھیل گئی گھر میں شام ہجر

    تا صبح ڈوب ڈوب کے ابھرا کرے کوئی

    میں ہوں کسی صدا کے شکنجے میں جعفریؔ

    میرا پتا ہواؤں سے پوچھا کرے کوئی

    مآخذ:

    • کتاب : Sar Sabz (Pg. 136)
    • Author : Krishn Kumar Toor
    • مطبع : Aariz Offset Press 123 Shahzad Bagh Ind. Phase-II Delhi-35 ( 1986)
    • اشاعت :  1986

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY