اب تک مجھے نہ کوئی مرا رازداں ملا

جمیل الدین عالی

اب تک مجھے نہ کوئی مرا رازداں ملا

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    اب تک مجھے نہ کوئی مرا رازداں ملا

    جو بھی ملا اسیر زمان و مکاں ملا

    کیا جانے کیا سمجھ کے ہمیشہ کیا گریز

    سو بار بجلیوں کو مرا آشیاں ملا

    اکتا گیا ہوں جادۂ نو کی تلاش سے

    ہر راہ میں کوئی نہ کوئی کارواں ملا

    مدت میں ہم نے آپ بنایا تھا اک افق

    جاتے تھے اس طرف کہ ترا آستاں ملا

    کن حوصلوں کے کتنے دیے بجھ کے رہ گئے

    اے سوز عاشقی تو بہت ہی گراں ملا

    کیا کچھ لٹا دیا ہے تری ہر ادا کے ساتھ

    کیا مل گیا ہمیں جو یہ حسن بیاں ملا

    تھا ایک راز دار محبت سے لطف زیست

    لیکن وہ راز دار محبت کہاں ملا

    اک عمر بعد اسی متلون نگاہ میں

    کتنی محبتوں کا خزانہ نہاں ملا

    اب جستجو کا رخ جو مڑا ہے تو مت پکار

    سب تجھ کو ڈھونڈتے تھے مگر تو کہاں ملا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY