اب وہ موڑ آیا کہ ہر پل معتبر ہونے کو ہے

محمد احمد رمز

اب وہ موڑ آیا کہ ہر پل معتبر ہونے کو ہے

محمد احمد رمز

MORE BY محمد احمد رمز

    اب وہ موڑ آیا کہ ہر پل معتبر ہونے کو ہے

    دیکھنا منظر نیا دیوار در ہونے کو ہے

    اب لہو کا رنگ گہرا ہے مری تصویر میں

    ایسا لگتا ہے کہ قصہ مختصر ہونے کو ہے

    اڑ چلی ہے ہر طرف دامن میں بھر لینے کی بات

    قطرہ قطرہ اس کے دریا کا گہر ہونے کو ہے

    میں بھی دیکھوں مجھ کو منظر سے ہٹا دینے کے بعد

    اب تماشا کون سا بار دگر ہونے کو ہے

    پھر تراشی جانے والی ہیں چراغوں کی لویں

    شام ہوتے ہوتے گرم ایسی خبر ہونے کو ہے

    مڑ کے دیکھوں تو عقب میں کچھ نظر آتا نہیں

    سامنے بھی گم نشان رہگزر ہونے کو ہے

    اب نئی راہیں کھلیں گی مجھ پر امکانات کی

    رمزؔ میرے تن پہ ظاہر میرا سر ہونے کو ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites