اے دل اچھا نہیں مصروف فغاں ہو جانا

فیض الحسن خیال

اے دل اچھا نہیں مصروف فغاں ہو جانا

فیض الحسن خیال

MORE BY فیض الحسن خیال

    اے دل اچھا نہیں مصروف فغاں ہو جانا

    غم کی توہین ہے اشکوں کا رواں ہو جانا

    دل کی آواز بھی مجروح جہاں ہوتی ہے

    ایسے حالات میں خاموش وہاں ہو جانا

    میرے آنسو جو گریں ٹانک لو تم جوڑے میں

    دیکھ لے کوئی تو پھولوں کا گماں ہو جانا

    اہل ساحل کو بھی اندازۂ طوفاں ہو جائے

    قطرۂ اشک ذرا سیل رواں ہو جانا

    رخصت موسم گل کے بھی اٹھاؤ صدمے

    اتنا آساں نہیں احساس خزاں ہو جانا

    قید موسم نہیں نغمات عنا دل کے لیے

    کوئی موسم ہو گل تر کی زباں ہو جانا

    میرے جینے کا سہارا تھیں جو نظریں کل تک

    کیا ستم ہے انہیں نظروں کا گراں ہو جانا

    شوق افزا ہے یہ انداز حجاب خوباں

    دل میں رہتے ہوئے آنکھوں سے نہاں ہو جانا

    وہ گلستاں میں جو آ جائیں تو ممکن ہے خیالؔ

    مسکراتی ہوئی کلیوں کا جواں ہو جانا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites