اے دل زار کہیں نیند نہ ہو طاری

رفیق راز

اے دل زار کہیں نیند نہ ہو طاری

رفیق راز

MORE BYرفیق راز

    اے دل زار کہیں نیند نہ ہو طاری

    چشم درویش بھی خوابوں سے نہیں عاری

    جسم کا دشت بھی سنسان ہے برسوں سے

    ملک دل پر بھی نہیں روح کی سرداری

    چاند سے کم نہ تھی ہم ہجر کے ماروں کو

    اس شب تار میں موہوم سی چنگاری

    یک بیک کون مری فکر میں در آیا

    نہر خوشبو سی بیاباں میں ہوئی جاری

    راکھ کے ڈھیر میں شعلہ ہے کوئی رقصاں

    میرے اندر ہے ابھی تک کوئی انکاری

    زلف پیچاں تری زنجیر بنے گی کب

    کب عمل میں مری آئے گی گرفتاری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے