اے زمانے تری رفتار سے ڈر لگتا ہے

روپ ساگر

اے زمانے تری رفتار سے ڈر لگتا ہے

روپ ساگر

MORE BYروپ ساگر

    اے زمانے تری رفتار سے ڈر لگتا ہے

    اب تری دوستی سے پیار سے ڈر لگتا ہے

    کن ہواؤں کا اثر تجھ پے ہوا جاتا ہے

    تیرے بدلے ہوئے کردار سے ڈر لگتا ہے

    دیکھ سکتہ نہیں ناکام تجھے دنیا میں

    جیت سے اپنی تری ہار سے ڈر لگتا ہے

    دل کو آتا نہیں اظہار محبت کرنا

    اور مجھ کو تیرے انکار سے ڈر لگتا ہے

    زیست سے پائے ہیں غم اتنے کہ اب تو ہم کو

    اپنی خوشیوں کے بھی گلزار سے ڈر لگتا ہے

    اس قدر شور ہے ان پاؤں کی زنجیروں کا

    مجھ کو پائل کی بھی جھنکار سے ڈر لگتا ہے

    نکتہ چینی ہے سب احباب کا شیوہ ساگرؔ

    اس لیے اپنی ہی گفتار سے ڈر لگتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY