ایسے بے مہر زمانے سے وفا مانگتا ہے

شہزاد نیر

ایسے بے مہر زمانے سے وفا مانگتا ہے

شہزاد نیر

MORE BYشہزاد نیر

    ایسے بے مہر زمانے سے وفا مانگتا ہے

    دل بھی سادہ ہے خلاؤں میں ہوا مانگتا ہے

    اس کا ہم عشق پرستوں سے تقابل کیسا

    شیخ تو اپنی عبادت کا صلہ مانگتا ہے

    جا کسی اور سے لے نسبت افلاک میاں

    ہم زمیں زاد فقیروں سے یہ کیا مانگتا ہے

    محتسب دامن تعزیر کشادہ رکھنا

    شہر کا شہر بغاوت کی سزا مانگتا ہے

    خوف اتنا ہے کہ بازاروں کے سینے ساکت

    قریہ قریہ کسی باغی کی صدا مانگتا ہے

    لاکھ سمجھاؤں محبت کی جھلک پاتے ہی

    دل وہ ترسا ہوا سائل ہے کہ جا مانگتا ہے

    کچھ نہ مل پائے تو مجبور طبیعت انساں

    مسجد و دیر و کلیسا سے دعا مانگتا ہے

    میری آنکھیں ترے چہرے کی تمازت چاہیں

    میرا چہرہ ترے آنچل کی ہوا مانگتا ہے

    تجھ سے جینے کے جو اسباب طلب کرتا تھا

    اب وہ جی جان سے مرنے کی دعا مانگتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY