عجب صورت سے دل گھبرا رہا ہے

سراج لکھنوی

عجب صورت سے دل گھبرا رہا ہے

سراج لکھنوی

MORE BYسراج لکھنوی

    عجب صورت سے دل گھبرا رہا ہے

    ہنسی کے ساتھ رونا آ رہا ہے

    مجھے دل سے بھلایا جا رہا ہے

    پسینے پر پسینا آ رہا ہے

    مروت شرط ہے اے یاد جاناں

    تمناؤں کا جی گھبرا رہا ہے

    مری نیندیں تو آنکھوں سے اڑا دیں

    مگر خود وقت سویا جا رہا ہے

    ادب کر اے غم دوراں ادب کر

    کسی کی یاد میں فرق آ رہا ہے

    یہ آدھی رات یہ کافر اندھیرا

    نہ سوتا ہوں نہ جاگا جا رہا ہے

    ذرا دیکھو یہ سرکش ذرۂ خاک

    فلک کا چاند بنتا جا رہا ہے

    سراجؔ اب دل کشی کیا زندگی میں

    بہ مشکل وقت کاٹا جا رہا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY