الماری سے خط اس کے پرانے نکل آئے

منور رانا

الماری سے خط اس کے پرانے نکل آئے

منور رانا

MORE BY منور رانا

    الماری سے خط اس کے پرانے نکل آئے

    پھر سے مرے چہرے پہ یہ دانے نکل آئے

    ماں بیٹھ کے تکتی تھی جہاں سے مرا رستہ

    مٹی کے ہٹاتے ہی خزانے نکل آئے

    ممکن ہے ہمیں گاؤں بھی پہچان نہ پائے

    بچپن میں ہی ہم گھر سے کمانے نکل آئے

    اے ریت کے ذرے ترا احسان بہت ہے

    آنکھوں کو بھگونے کے بہانے نکل آئے

    اب تیرے بلانے سے بھی ہم آ نہیں سکتے

    ہم تجھ سے بہت آگے زمانے نکل آئے

    ایک خوف سا رہتا ہے مرے دل میں ہمیشہ

    کس گھر سے تری یاد نہ جانے نکل آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY