اپنے گزرے ہوئے لمحات ذرا یاد کرو

سید عارف علی عارف

اپنے گزرے ہوئے لمحات ذرا یاد کرو

سید عارف علی عارف

MORE BYسید عارف علی عارف

    اپنے گزرے ہوئے لمحات ذرا یاد کرو

    روز ہوتی تھی ملاقات ذرا یاد کرو

    کیا سہانی تھی گھڑی کیسا سہانا موسم

    چاند تاروں کی حسیں رات ذرا یاد کرو

    تم اگر بھول گئے ہو تو کوئی بات نہیں

    اس انگوٹھی کی وہ سوغات ذرا یاد کرو

    چھت پہ آ جاتے تھے کپڑوں کا بہانا کر کے

    کیا محبت کے تھے جذبات ذرا یاد کرو

    میری مرضی میں ہوا کرتی تھی تیری مرضی

    کتنے ملتے تھے خیالات ذرا یاد کرو

    کس قدر میری محبت کے زمانہ تھا خلاف

    بس اکیلی تھی مری ذات ذرا یاد کرو

    غم کے بادل جو اٹھا کرتے تھے دل پر عارفؔ

    اپنے اشکوں کی وہ برسات ذرا یاد کرو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے