اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا

میر تقی میر

اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا

    لوہو آتا ہے جب نہیں آتا

    ہوش جاتا نہیں رہا لیکن

    جب وہ آتا ہے تب نہیں آتا

    صبر تھا ایک مونس ہجراں

    سو وہ مدت سے اب نہیں آتا

    دل سے رخصت ہوئی کوئی خواہش

    گریہ کچھ بے سبب نہیں آتا

    عشق کو حوصلہ ہے شرط ارنہ

    بات کا کس کو ڈھب نہیں آتا

    جی میں کیا کیا ہے اپنے اے ہمدم

    پر سخن تا بلب نہیں آتا

    دور بیٹھا غبار میرؔ اس سے

    عشق بن یہ ادب نہیں آتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مہناز بیگم

    مہناز بیگم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY