اشک باری نہ مٹی سینہ فگاری نہ گئی

اختر شیرانی

اشک باری نہ مٹی سینہ فگاری نہ گئی

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    اشک باری نہ مٹی سینہ فگاری نہ گئی

    لالہ کاری کسی صورت بھی ہماری نہ گئی

    کوچۂ حسن چھٹا تو ہوئے رسوائے شراب

    اپنی قسمت میں جو لکھی تھی وہ خواری نہ گئی

    ان کی مستانہ نگاہوں کا نہیں کوئی قصور

    ناصحو زندگی خود ہم سے سنواری نہ گئی

    چشم محزوں پہ نہ لہرائی وہ زلف شاداب

    یہ پری ہم سے بھی شیشے میں اتاری نہ گئی

    مدتیں ہو گئیں بچھڑے ہوئے تم سے لیکن

    آج تک دل سے مرے یاد تمہاری نہ گئی

    شاد و خنداں رہے ہم یوں تو جہاں میں لیکن

    اپنی فطرت سے کبھی درد شعاری نہ گئی

    سیکڑوں بار مرے سامنے کی توبہ مگر

    توبہ اخترؔ کہ تری بادہ گساری نہ گئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY