اشک غم آنکھ سے باہر بھی نہیں آنے کا

ظفر گورکھپوری

اشک غم آنکھ سے باہر بھی نہیں آنے کا

ظفر گورکھپوری

MORE BYظفر گورکھپوری

    اشک غم آنکھ سے باہر بھی نہیں آنے کا

    ابر چھٹ جائیں وہ منظر بھی نہیں آنے کا

    اب کے آغاز سفر سوچ سمجھ کے کرنا

    دشت ملنے کا نہیں گھر بھی نہیں آنے کا

    ہائے کیا ہم نے تڑپنے کا صلہ پایا ہے

    ایسا آرام جو آ کر بھی نہیں آنے کا

    عہد غالبؔ سے زیادہ ہے مرے عہد کا کرب

    اب تو کوزے میں سمندر بھی نہیں آنے کا

    سبزہ دیوار پہ اگ آیا ظفرؔ خوش ہو لو

    آگے آنکھوں میں یہ منظر بھی نہیں آنے کا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY