اوقات شیخ گو کہ سجود و قیام ہے

شیخ ظہور الدین حاتم

اوقات شیخ گو کہ سجود و قیام ہے

شیخ ظہور الدین حاتم

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    اوقات شیخ گو کہ سجود و قیام ہے

    میرے کنے تو ایک خدا ہی کا نام ہے

    ہر صبح اٹھ بتوں سے مجھے رام رام ہے

    زاہد تری نماز کو میرا سلام ہے

    تیری نگہ کے دور میں ایسا ہوا ہوں مست

    ساغر سے مجھ کو آنکھ ملانا حرام ہے

    ہم اور تیری شکایتیں ظالم خدا سے ڈر

    بہتان ہے غلط ہے یہ محض اتہام ہے

    دن کو نہ بھوک ہے نہ مجھے رات کو ہے نیند

    اس روزگار میں یہ مری صبح و شام ہے

    مرتا ہوں آ کے دیکھ ترے انتظار میں

    ورنہ سنے گا اب کوئی دم کو تمام ہے

    قاصد کہاں چلا ہے مجھے بھی خبر تو دے

    یک دم تو بیٹھ جا کہ مجھے تجھ سے کام ہے

    تجھ کو قسم خدا کی جو جاتا ہے اس طرف

    تو بھولیو نہ اتنا ہی میرا پیام ہے

    کہیو مری طرف سے نہ پہنچا مرا جواب

    اتنا دماغ کیا ترا حاتمؔ غلام ہے

    قاصد سے اس نے سن کے حقیقت کہا کہ واہ

    کیا خوب اس سخن کا کوئی یہ مقام ہے

    کہنا اسے یہی تو کہ اے بو الہوس ہنوز

    عاشق ہوا تو پر یہ ترا عشق خام ہے

    معشوق کی جناب میں کوئی بھی بے ادب

    بولا ہے اس طرح سے جو تیرا کلام ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Diwan-e-Zadah (Pg. 297)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY