اور کچھ اس کے سوا اہل نظر جانتے ہیں

فرید پربتی

اور کچھ اس کے سوا اہل نظر جانتے ہیں

فرید پربتی

MORE BYفرید پربتی

    اور کچھ اس کے سوا اہل نظر جانتے ہیں

    پگڑیاں اپنی بچانے کا ہنر جانتے ہیں

    اک ستارے کو ضیا بار دکھانے کے لئے

    وہ بجھائیں گے سبھی شمس و قمر جانتے ہیں

    خواب میں دیکھتے ہیں کھڑکیاں ہر گھر کی کھلی

    دور ہو جائے گا اب شہر سے ڈر جانتے ہیں

    میزبانی تھی کبھی جن میں میسر تیری

    پلٹ آئیں گے وہی شام و سحر جانتے ہیں

    تری جھولی میں ستارے یہ نہیں گرنے کے

    ہر طلب گار کا وہ طرز نظر جانتے ہیں

    یہ جو سستانے یہاں آتے ہیں صاحب اک دن

    سائے کے ساتھ وہ مانگیں گے شجر جانتے ہیں

    تیز آندھی سے دیے سارے بچانے کو فریدؔ

    خود کو رکھے گا سر راہ گزر جانتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY