عذاب حسرت و آلام سے نکل جاؤ

ناز خیالوی

عذاب حسرت و آلام سے نکل جاؤ

ناز خیالوی

MORE BYناز خیالوی

    عذاب حسرت و آلام سے نکل جاؤ

    مری سحر سے مری شام سے نکل جاؤ

    بہانہ چاہیے گھر سے کوئی نکلنے کو

    کسی طلب میں کسی کام سے نکل جاؤ

    ہمارے خانۂ دل میں رہو سکون کے ساتھ

    نکلنا چاہو تو آرام سے نکل جاؤ

    خدا نصیب کرے تم کو بے گھری کا مذاق

    حصار شوق در و بام سے نکل جاؤ

    سفر ہے شرط مسافر نواز بہتیرے

    کسی طرف بھی کسی کام سے نکل جاؤ

    نکال پھینکو دلوں سے بتان بغض و عناد

    نہیں تو حلقۂ اسلام سے نکل جاؤ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY