عزیز اتنا ہی رکھو کہ جی سنبھل جائے

عبید اللہ علیم

عزیز اتنا ہی رکھو کہ جی سنبھل جائے

عبید اللہ علیم

MORE BY عبید اللہ علیم

    عزیز اتنا ہی رکھو کہ جی سنبھل جائے

    اب اس قدر بھی نہ چاہو کہ دم نکل جائے

    ملے ہیں یوں تو بہت آؤ اب ملیں یوں بھی

    کہ روح گرمیٔ انفاس سے پگھل جائے

    محبتوں میں عجب ہے دلوں کو دھڑکا سا

    کہ جانے کون کہاں راستہ بدل جائے

    زہے وہ دل جو تمنائے تازہ تر میں رہے

    خوشا وہ عمر جو خوابوں ہی میں بہل جائے

    میں وہ چراغ سر رہ گزار دنیا ہوں

    جو اپنی ذات کی تنہائیوں میں جل جائے

    ہر ایک لحظہ یہی آرزو یہی حسرت

    جو آگ دل میں ہے وہ شعر میں بھی ڈھل جائے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عبید اللہ علیم

    عبید اللہ علیم

    RECITATIONS

    عبید اللہ علیم

    عبید اللہ علیم

    فہد حسین

    فہد حسین

    عبید اللہ علیم

    عزیز اتنا ہی رکھو کہ جی سنبھل جائے عبید اللہ علیم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY