بہ فیض آگہی ہے مدعا سنجیدہ سنجیدہ

سید جمیل مدنی

بہ فیض آگہی ہے مدعا سنجیدہ سنجیدہ

سید جمیل مدنی

MORE BYسید جمیل مدنی

    بہ فیض آگہی ہے مدعا سنجیدہ سنجیدہ

    خودی نے وا کئے ہیں راز کیا پیچیدہ پیچیدہ

    نظر حیراں طبیعت ہے ذرا رنجیدہ رنجیدہ

    ہوا دل ہے کسی کا مبتلا پوشیدہ پوشیدہ

    فضاؤں سے فسانہ سن کے اس کے درد ہجراں کا

    گلوں نے چن لئے اشک صبا لرزیدہ لرزیدہ

    اسی مست جوانی کے قدم بڑھ کر لئے ہوں گے

    چمن میں چل رہی ہے جو صبا لغزیدہ لغزیدہ

    ٹھہر جائے نہ گھبرا کر کہیں یہ قافلہ دل کا

    مری جانب نظر پھر سے اٹھا دزدیدہ دزدیدہ

    جمیلؔ زار کا ہے یہ نشاں اے گلستاں والو

    جواں ہمت پریشاں حال سا کاہیدہ کاہیدہ

    مآخذ:

    • کتاب : Shora-e-London (Pg. 62)
    • Author : Jauhar Zahiri
    • مطبع : Books From India (U.K) Ltd. 45, Museum Street, Londan W.C-1 (1985)
    • اشاعت : 1985

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY