بعد مدت کے کبھی مجھ سے ملی کہنے لگی

سندیپ گپتے

بعد مدت کے کبھی مجھ سے ملی کہنے لگی

سندیپ گپتے

MORE BYسندیپ گپتے

    بعد مدت کے کبھی مجھ سے ملی کہنے لگی

    میری پرچھائی بھی مجھ کو اجنبی کہنے لگی

    وہ کہا میں نے زباں سے جو مرے دل میں نہ تھا

    میرے دل کی بات میری خامشی کہنے لگی

    ذرہ ذرہ ہے یہاں روشن اسی کے نور سے

    میں اسی کی اک شعاع ہوں روشنی کہنے لگی

    دیکھ کر اونچائی میرے خواب کی پرواز کی

    میں ہوں بے بس تیرے آگے بے بسی کہنے لگی

    تو کہاں رہتی ہے پوچھا تھا کسی نے ایک دن

    میں غموں کے ساتھ رہتی ہوں خوشی کہنے لگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY