بڑی تمنا ہے جاؤں سوئے ستم کسی دن

ناظم سلطانپوری

بڑی تمنا ہے جاؤں سوئے ستم کسی دن

ناظم سلطانپوری

MORE BYناظم سلطانپوری

    بڑی تمنا ہے جاؤں سوئے ستم کسی دن

    مزاج پوچھے تو کوئی اہل کرم کسی دن

    وہ بھیگا چہرہ سبھوں سے ہٹ کر سوال پوچھے

    ہماری آنکھوں کی آگ ہوگی نہ کم کسی دن

    ہمارے مسلک کا آدمی کیا کہے گا ہم کو

    جو ڈھل گئے مصلحت کے سانچے میں ہم کسی دن

    ہمارے مابین بد گمانی کی اینٹ کیسی

    ملے جو موقع تو پوچھیں تجھ سے صنم کسی دن

    جو آئینے میں تمہارے جاگے وہ عکس رکھ لو

    یہ بھیڑ پرچھائیوں کی ہوگی نہ کم کسی دن

    تمہیں بھی ہم زندگی کی کوئی صلاح دیں گے

    سمجھ گئے دھوپ‌ چھاؤں اپنی جو ہم کسی دن

    ہمارے حصے کی روشنی تم جگائے رکھنا

    کہ تیرگی کے سفر سے لوٹیں گے ہم کسی دن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے