بہار آئی ہے آرائش چمن کے لیے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

بہار آئی ہے آرائش چمن کے لیے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    بہار آئی ہے آرائش چمن کے لیے

    مری بھی طبع کو تحریک ہے سخن کے لیے

    خیال تک نہ کیا اہل انجمن نے کبھی

    تمام رات جلی شمع انجمن کے لیے

    وطن میں آنکھ چراتے ہیں ہم سے اہل وطن

    تڑپتے رہتے ہیں غربت میں ہم وطن کے لیے

    چمن کے دام سے جائیں گے ہم کہاں صیاد

    قفس فضول ہے پروردۂ چمن کے لیے

    میں قید اشک سے آزاد ہوں محبت میں

    کہ تجھ کو شمع بنانا ہے انجمن کے لیے

    زبان اہل بصیرت پہ عرض حیرت ہے

    سکوت داد ہے گویا مرے سخن کے لیے

    فروغ طبع خدا داد گرچہ تھا وحشتؔ

    ریاض کم نہ کیا ہم نے کسب فن کے لیے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY