بحث میں دونوں کو لطف آتا رہا

جوشؔ ملسیانی

بحث میں دونوں کو لطف آتا رہا

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    بحث میں دونوں کو لطف آتا رہا

    مجھ کو دل میں دل کو سمجھاتا رہا

    ان کی محفل میں دل پر اضطراب

    ایک شعلہ تھا جو تھراتا رہا

    موت کے دھوکے میں ہم کیوں آ گئے

    زندگی کا بھی مزا جاتا رہا

    ناشگفتہ ہی رہی دل کی کلی

    موسم گل بارہا آتا رہا

    جب سے تم نے دشمنی کی اختیار

    اعتبار دوستی جاتا رہا

    اپنی ہی ضد کی دل بے تاب نے

    ان کے در تک بھی میں سمجھاتا رہا

    جور تو اے جوشؔ آخر جور ہے

    لطف بھی ان کا ستم ڈھاتا رہا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY