بہتی ہوئی آنکھوں کی روانی میں مرے ہیں

اعجاز توکل

بہتی ہوئی آنکھوں کی روانی میں مرے ہیں

اعجاز توکل

MORE BYاعجاز توکل

    بہتی ہوئی آنکھوں کی روانی میں مرے ہیں

    کچھ خواب مرے عین جوانی میں مرے ہیں

    روتا ہوں میں ان لفظوں کی قبروں پے کئی بار

    جو لفظ مری شعلہ بیانی میں مرے ہیں

    کچھ تجھ سے یہ دوری بھی مجھے مار گئی ہے

    کچھ جذبے مرے نقل مکانی میں مرے ہیں

    قبروں میں نہیں ہم کو کتابوں میں اتارو

    ہم لوگ محبت کی کہانی میں مرے ہیں

    اس عشق نے آخر ہمیں برباد کیا ہے

    ہم لوگ اسی کھولتے پانی میں مرے ہیں

    کچھ حد سے زیادہ تھا ہمیں شوق محبت

    اور ہم ہی محبت کی گرانی میں مرے ہیں

    RECITATIONS

    عاطر علی سید

    عاطر علی سید

    عاطر علی سید

    بہتی ہوئی آنکھوں کی روانی میں مرے ہیں عاطر علی سید

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY