بہت ہی دل نشیں آواز پا تھی

نوشاد علی

بہت ہی دل نشیں آواز پا تھی

نوشاد علی

MORE BYنوشاد علی

    بہت ہی دل نشیں آواز پا تھی

    نہ جانے تم تھے یا باد صبا تھی

    بجا کرتی تھیں کیا شہنائیاں سی

    خموشی بھی ہماری جب نوا تھی

    وہ دشمن ہی سہی یارو ہمارا

    پر اس کی جو ادا تھی کیا ادا تھی

    سبھی عکس اپنا اپنا دیکھتے تھے

    ہماری زندگی وہ آئینہ تھی

    چلا جاتا تھا ہنستا کھیلتا میں

    نگاہ یار میری رہنما تھی

    چلو ٹوٹی تو زنجیر محبت

    مصیبت تھی قیامت تھی بلا تھی

    نہ ہم بدلے نہ تم بدلے ہو لیکن

    نہیں جو درمیاں وہ چیز کیا تھی

    محبت پر اداسی چھا رہی ہے

    ہے کیا انجام اور کیا ابتدا تھی

    شگوفے پھوٹتے تھے دل سے نوشادؔ

    یہ وادی پہلے کتنی پر فضا تھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بہت ہی دل نشیں آواز پا تھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY