بیٹھے تو پاس ہیں پر آنکھ اٹھا سکتے نہیں

جرأت قلندر بخش

بیٹھے تو پاس ہیں پر آنکھ اٹھا سکتے نہیں

جرأت قلندر بخش

MORE BYجرأت قلندر بخش

    بیٹھے تو پاس ہیں پر آنکھ اٹھا سکتے نہیں

    جی لگا ہے پہ ابھی ہاتھ لگا سکتے نہیں

    دور سے دیکھ وہ لب کاٹتے ہیں اپنے ہونٹھ

    ہے ابھی پاس ادب ہونٹھ ہلا سکتے نہیں

    تکتے ہیں اس قد و رخسار کو حسرت سے اور آہ

    بھینچ کر خوب سا چھاتی سے لگا سکتے نہیں

    دل تو ان پاؤں پہ لوٹے ہے مرا وقت خرام

    شب کو دزدی سے بھی پر ان کو دبا سکتے نہیں

    چور سے رات کھڑے رہتے ہیں اس در سے لگے

    پر جو مطلوب ہے وہ جنس چرا سکتے نہیں

    ریجھتے ان کی اداؤں پہ ہیں کیا کیا لیکن

    مارے اندیشے کے گردن بھی ہلا سکتے نہیں

    دیکھ رہتے ہیں وہ آئینۂ زانو اس کا

    پر کسی شکل سے زانو کو بھڑا سکتے نہیں

    قاعدے کیا ہمیں معلوم نہیں الفت کے

    بے کم و کاست مگر ان کو پڑھا سکتے نہیں

    چپکے تک رہتے ہیں رنگ اس کا بھبوکا سا ہم

    آہ پر دل کی لگی اپنی بجھا سکتے نہیں

    کیا غضب ہے کہ وہی بولے تو بولے از خود

    ہم انہیں کیوں کہ بلاویں کہ بلا سکتے نہیں

    گرچہ ہم خانہ ہیں جرأتؔ پہ ہمارے ایسے

    بخت سوئے کہ کہیں ساتھ سلا سکتے نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY