برہم کبھی قاصد سے وہ محبوب نہ ہوتا

جرأت قلندر بخش

برہم کبھی قاصد سے وہ محبوب نہ ہوتا

جرأت قلندر بخش

MORE BYجرأت قلندر بخش

    برہم کبھی قاصد سے وہ محبوب نہ ہوتا

    گر نام ہمارا سر مکتوب نہ ہوتا

    خوبان جہاں کی ہے ترے حسن سے خوبی

    تو خوب نہ ہوتا تو کوئی خوب نہ ہوتا

    اسلام سے برگشتہ نہ ہوتے بخدا ہم

    گر عشق بتاں طبع کے مرغوب نہ ہوتا

    کیوں پھیر وہ دیتا مجھے لے کر مرے بر سے

    اتنا جو دل زار یہ معیوب نہ ہوتا

    اس بت کو خدا لایا ہے ہم پاس وگرنہ

    جینے کا ہمارے کوئی اسلوب نہ ہوتا

    دل آج کے دن پاس جو ہوتا مرے تو آہ!

    آنے سے میں اس شوخ کے محجوب نہ ہوتا

    ہیں لازم و ملزوم بہم حسن و محبت

    ہم ہوتے نہ طالب جو وہ مطلوب نہ ہوتا

    سر اپنا رہ عشق میں دیتا جو نہ جرأتؔ

    تو مجمع عشاق کا سرکوب نہ ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY