بس کہ پابندی آئین وفا ہم سے ہوئی

خلیل الرحمن اعظمی

بس کہ پابندی آئین وفا ہم سے ہوئی

خلیل الرحمن اعظمی

MORE BYخلیل الرحمن اعظمی

    بس کہ پابندی آئین وفا ہم سے ہوئی

    یہ اگر کوئی خطا ہے تو خطا ہم سے ہوئی

    زندگی تیرے لیے سب کو خفا ہم نے کیا

    اپنی قسمت ہے کہ اب تو بھی خفا ہم سے ہوئی

    رات بھر چین سے سونے نہیں دیتی ہم کو

    اتنی مایوس تری زلف رسا ہم سے ہوئی

    سر اٹھانے کا بھلا اور کسے یارا تھا

    بس ترے شہر میں یہ رسم ادا ہم سے ہوئی

    بارہا دست ستم گر کو قلم ہم نے کیا

    بارہا چاک اندھیرے کی قبا ہم سے ہوئی

    ہم نے اتنے ہی سر راہ جلائے ہیں چراغ

    جتنی برگشتہ زمانے کی ہوا ہم سے ہوئی

    بار ہستی تو اٹھا اٹھ نہ سکا دست سوال

    مرتے مرتے نہ کبھی کوئی دعا ہم سے ہوئی

    کچھ دنوں ساتھ لگی تھی ہمیں تنہا پا کر

    کتنی شرمندہ مگر موج بلا ہم سے ہوئی

    مأخذ :
    • کتاب : aasmaan ai aasmaan (Pg. 100)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے