بے مہر کہتے ہو اسے جو بے وفا نہیں

میر تسکینؔ دہلوی

بے مہر کہتے ہو اسے جو بے وفا نہیں

میر تسکینؔ دہلوی

MORE BYمیر تسکینؔ دہلوی

    بے مہر کہتے ہو اسے جو بے وفا نہیں

    سچ ہے کہ بے وفا ہوں میں تم بے وفا نہیں

    عقدہ جو دل میں ہے مرے ہونے کا وا نہیں

    جب تک کہ آپ کھولتے زلف دوتا نہیں

    عیاری دیکھنا جو گلے ملنے کو کہو

    کہتا ہے میں تو تم سے ہوا کچھ خفا نہیں

    اشکوں کے ساتھ قطرۂ خوں تھا نکل گیا

    سینے میں سے تو دل کو کوئی لے گیا نہیں

    جلتا ہے سادہ لوحی پہ کیا اپنی جی مرا

    دل لے کے اب جو بات وہ کرتا ذرا نہیں

    وہ پر خطر ہے وادئ الفت کہ راہ میں

    کہتے ہیں خضر ہائے کوئی رہنما نہیں

    کرتا ہوں تیری زلف سے دل کا مبادلہ

    ہر چند جانتا ہوں یہ سودا برا نہیں

    کیسے وہ تلخ تر ہیں مرے شور عشق سے

    قسمت سے اپنا چاہنے میں بھی مزا نہیں

    جوش جنوں میں سر پہ اڑائیں کہاں سے خاک

    دل کیا گیا غبار ہی جی میں رہا نہیں

    دیکھوں تو لے ہے جان ملک الموت کس طرح

    تم وقت مرگ پاس سے اٹھنا ذرا نہیں

    تسکیںؔ نے نام لے کے ترا وقت مرگ آہ

    کیا جانے کیا کہا تھا کسی نے سنا نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY