بے وجہ نئیں ہے آئنہ ہر بار دیکھنا

محمد رفیع سودا

بے وجہ نئیں ہے آئنہ ہر بار دیکھنا

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    بے وجہ نئیں ہے آئنہ ہر بار دیکھنا

    کوئی دم کو پھولتا ہے یہ گل زار دیکھنا

    نرگس کی طرح خاک میری اگیں ہیں چشم

    ٹک آن کے یہ حسرت دیدار دیکھنا

    کھینچے تو تیغ ہے حرم دل کے صید پر

    اے عشق پر بھلا تو مجھے مار دیکھنا

    ہے نقص جان دید ترا پر یہی ہے دھن

    جی جاؤ یار ہو مجھے یک بار دیکھنا

    اے طفل اشک ہے فلک ہفتمیں پہ عرش

    آگے قدم نہ رکھیو تو زنہار دیکھنا

    پوچھے خدا سبب جو مرے اشتیاق کا

    میری زباں سے ہو یہی اظہار دیکھنا

    ہر نقش پا پہ تڑپے ہے یارو ہر ایک دل

    ٹک واسطے خدا کے یہ رفتار دیکھنا

    کرتا تو ہے تو آن کے سوداؔ سے اختلاط

    کوئی لہر آ گئی تو مرے یار دیکھنا

    تجھ بن عجب معاش ہے سوداؔ کا ان دنوں

    تو بھی ٹک اس کو جا کے ستم گار دیکھنا

    نے حرف و نے حکایت و نے شعر و نے سخن

    نے سیر باغ و نے گل و گلزار دیکھنا

    خاموش اپنے کلبۂ احزاں میں روز و شب

    تنہا پڑے ہوئے در و دیوار دیکھنا

    یا جا کے اس گلی میں جہاں تھا ترا گزر

    لے صبح تا بہ شام کئی بار دیکھنا

    تسکین دل نہ اس میں بھی پائی تو بہر شغل

    پڑھنا یہ شعر گر کبھو اشعار دیکھنا

    کہتے تھے ہم نہ دیکھ سکیں روز ہجر کو

    پر جو خدا دکھائے سو ناچار دیکھنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY