بھری ہے دل میں جو حسرت کہوں تو کس سے کہوں

بہادر شاہ ظفر

بھری ہے دل میں جو حسرت کہوں تو کس سے کہوں

بہادر شاہ ظفر

MORE BYبہادر شاہ ظفر

    بھری ہے دل میں جو حسرت کہوں تو کس سے کہوں

    سنے ہے کون مصیبت کہوں تو کس سے کہوں

    جو تو ہو صاف تو کچھ میں بھی صاف تجھ سے کہوں

    ترے ہے دل میں کدورت کہوں تو کس سے کہوں

    نہ کوہ کن ہے نہ مجنوں کہ تھے مرے ہمدرد

    میں اپنا درد محبت کہوں تو کس سے کہوں

    دل اس کو آپ دیا آپ ہی پشیماں ہوں

    کہ سچ ہے اپنی ندامت کہوں تو کس سے کہوں

    کہوں میں جس سے اسے ہووے سنتے ہی وحشت

    پھر اپنا قصۂ وحشت کہوں تو کس سے کہوں

    رہا ہے تو ہی تو غم خوار اے دل غمگیں

    ترے سوا غم فرقت کہوں تو کس سے کہوں

    جو دوست ہو تو کہوں تجھ سے دوستی کی بات

    تجھے تو مجھ سے عداوت کہوں تو کس سے کہوں

    نہ مجھ کو کہنے کی طاقت کہوں تو کیا احوال

    نہ اس کو سننے کی فرصت کہوں تو کس سے کہوں

    کسی کو دیکھتا اتنا نہیں حقیقت میں

    ظفرؔ میں اپنی حقیقت کہوں تو کس سے کہوں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مہران امروہی

    مہران امروہی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بھری ہے دل میں جو حسرت کہوں تو کس سے کہوں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY