بھویں تنتی ہیں خنجر ہاتھ میں ہے تن کے بیٹھے ہیں

داغؔ دہلوی

بھویں تنتی ہیں خنجر ہاتھ میں ہے تن کے بیٹھے ہیں

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    بھویں تنتی ہیں خنجر ہاتھ میں ہے تن کے بیٹھے ہیں

    کسی سے آج بگڑی ہے کہ وہ یوں بن کے بیٹھے ہیں

    دلوں پر سیکڑوں سکے ترے جوبن کے بیٹھے ہیں

    کلیجوں پر ہزاروں تیر اس چتون کے بیٹھے ہیں

    الٰہی کیوں نہیں اٹھتی قیامت ماجرا کیا ہے

    ہمارے سامنے پہلو میں وہ دشمن کے بیٹھے ہیں

    یہ گستاخی یہ چھیڑ اچھی نہیں ہے اے دل ناداں

    ابھی پھر روٹھ جائیں گے ابھی تو من کے بیٹھے ہیں

    اثر ہے جذب الفت میں تو کھنچ کر آ ہی جائیں گے

    ہمیں پروا نہیں ہم سے اگر وہ تن کے بیٹھے ہیں

    سبک ہو جائیں گے گر جائیں گے وہ بزم دشمن میں

    کہ جب تک گھر میں بیٹھے ہیں وہ لاکھوں من کے بیٹھے ہیں

    فسوں ہے یا دعا ہے یا معمہ کھل نہیں سکتا

    وہ کچھ پڑھتے ہوئے آگے مرے مدفن کے بیٹھے ہیں

    بہت رویا ہوں میں جب سے یہ میں نے خواب دیکھا ہے

    کہ آپ آنسو بہاتے سامنے دشمن کے بیٹھے ہیں

    کھڑے ہوں زیر طوبیٰ وہ نہ دم لینے کو دم بھر بھی

    جو حسرت مند تیرے سایۂ دامن کے بیٹھے ہیں

    تلاش منزل مقصد کی گردش اٹھ نہیں سکتی

    کمر کھولے ہوئے رستے میں ہم رہزن کے بیٹھے ہیں

    یہ جوش گریہ تو دیکھو کہ جب فرقت میں رویا ہوں

    در و دیوار اک پل میں مرے مدفن کے بیٹھے ہیں

    نگاہ شوخ و چشم شوق میں در پردہ چھنتی ہے

    کہ وہ چلمن میں ہیں نزدیک ہم چلمن کے بیٹھے ہیں

    یہ اٹھنا بیٹھنا محفل میں ان کا رنگ لائے گا

    قیامت بن کے اٹھیں گے بھبوکا بن کے بیٹھے ہیں

    کسی کی شامت آئے گی کسی کی جان جائے گی

    کسی کی تاک میں وہ بام پر بن ٹھن کے بیٹھے ہیں

    قسم دے کر انہیں یہ پوچھ لو تم رنگ ڈھنگ اس کے

    تمہاری بزم میں کچھ دوست بھی دشمن کے بیٹھے ہیں

    کوئی چھینٹا پڑے تو داغؔ کلکتے چلے جائیں

    عظیم آباد میں ہم منتظر ساون کے بیٹھے ہیں

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    بھویں تنتی ہیں خنجر ہاتھ میں ہے تن کے بیٹھے ہیں فصیح اکمل

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY