aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بھوک چہروں پہ لیے چاند سے پیارے بچے

بیدل حیدری

بھوک چہروں پہ لیے چاند سے پیارے بچے

بیدل حیدری

MORE BYبیدل حیدری

    بھوک چہروں پہ لیے چاند سے پیارے بچے

    بیچتے پھرتے ہیں گلیوں میں غبارے بچے

    ان ہواؤں سے تو بارود کی بو آتی ہے

    ان فضاؤں میں تو مر جائیں گے سارے بچے

    کیا بھروسہ ہے سمندر کا خدا خیر کرے

    سیپیاں چننے گئے ہیں مرے سارے بچے

    ہو گیا چرخ ستم گر کا کلیجہ ٹھنڈا

    مر گئے پیاس سے دریا کے کنارے بچے

    یہ ضروری ہے نئے کل کی ضمانت دی جائے

    ورنہ سڑکوں پہ نکل آئیں گے سارے بچے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے