چل نہیں سکتے وہاں ذہن رسا کے جوڑ توڑ

حبیب موسوی

چل نہیں سکتے وہاں ذہن رسا کے جوڑ توڑ

حبیب موسوی

MORE BYحبیب موسوی

    چل نہیں سکتے وہاں ذہن رسا کے جوڑ توڑ

    ان کی چالیں ہیں قیامت کی بلا کے جوڑ توڑ

    ہے نظر انداز کوئی کوئی منظور نظر

    دیکھنا اس بت کی چشم فتنہ زا کے جوڑ توڑ

    کج ادائی بات ہے جس کی لگاوٹ کھیل ہے

    سیکھ لے اس فتنہ گر سے کوئی آ کے جوڑ توڑ

    پا کے قابو کرتے ہیں اہل غرض کیا داؤں گھات

    چلتے ہیں مطلب کی چالیں مدعا کے جوڑ توڑ

    دوست بن کر کرتے ہیں نیکی کے پردے میں بدی

    راج نیت یہ ہے دیکھو اغنیا کے جوڑ توڑ

    سختیاں استاد ہیں انساں کی دنیا میں حبیبؔ

    کرتے ہیں مغلوب کو غالب سکھا کے جوڑ توڑ

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY