چمکنے لگا ہے ترا غم بہت

نور بجنوری

چمکنے لگا ہے ترا غم بہت

نور بجنوری

MORE BYنور بجنوری

    چمکنے لگا ہے ترا غم بہت

    دیے ہو چلے اب تو مدھم بہت

    گھٹاؤں میں طوفاں کے آثار ہیں

    تری زلف ہے آج برہم بہت

    یہاں لہلہائے ہیں اشکوں میں باغ

    نہ اترائے پھولوں پہ شبنم بہت

    یہ وہ دور ہے جس کا درماں نہیں

    یہ وہ راز ہے جس کے محرم بہت

    یہ دامان وحشت کی کچھ دھجیاں

    بنائیں گے لوگ ان سے پرچم بہت

    گدائے محبت کی خودداریاں

    ملے راہ میں خسرو و جم بہت

    سلگتی رہی رات بھر چاندنی

    شب ہجر تھی روشنی کم بہت

    نہ جائے گی دل سے کبھی آرزو

    یہ بنیاد ہے آہ محکم بہت

    مأخذ :
    • کتاب : NUQOOSH (Pg. 185)
    • Author : Mohammad Tufail
    • مطبع : Idarah Forogh-e-urdu, Lahore (Vol. 61,62Edition Jun/ Feb 1957)
    • اشاعت : Vol. 61,62Edition Jun/ Feb 1957

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY