چمن والو حقیقت ہم سے بتلائی نہیں جاتی

عارف اعظمی

چمن والو حقیقت ہم سے بتلائی نہیں جاتی

عارف اعظمی

MORE BYعارف اعظمی

    چمن والو حقیقت ہم سے بتلائی نہیں جاتی

    گلوں کے دل پہ جو بیتی وہ سمجھائی نہیں جاتی

    چمن کا حسن بالآخر گلوں کی آبرو ٹھہرا

    یہ عزت شاہ راہ عام پہ لائی نہیں جاتی

    غم دوراں کی الجھن ہو کہ وحشت ہو محبت کی

    شکستہ دل کی حالت بر زباں لائی نہیں جاتی

    ارے کم ظرف مے نوشی کا یہ کوئی سلیقہ ہے

    سر محفل مئے گل رنگ چھلکائی نہیں جاتی

    سجا دیتا ہوں خوابوں کے در و دیوار پہ اس کو

    وہ اک شے جو کسی صورت سے اپنائی نہیں جاتی

    نہ پوچھو کیا نگاہ ناز نے دل پر اثر چھوڑا

    غزل کے شعر میں تاثیر وہ لائی نہیں جاتی

    ہجوم شہر ہو عارفؔ کہ اپنے گھر کی خلوت ہو

    نہیں جاتی مگر اپنی یہ تنہائی نہیں جاتی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY