چھپا کر اپنی کرتوتیں ہنر کی بات کرتے ہیں

پرمود شرما اثر

چھپا کر اپنی کرتوتیں ہنر کی بات کرتے ہیں

پرمود شرما اثر

MORE BY پرمود شرما اثر

    چھپا کر اپنی کرتوتیں ہنر کی بات کرتے ہیں

    شجر کو کاٹنے والے ثمر کی بات کرتے ہیں

    جلے ہیں جو نشیمن راکھ پر ان کی کھڑے ہو کر

    جنہوں نے پھونک ڈالے گھر وہ گھر کی بات کرتے ہیں

    عناصر جس کے تھے مہر و وفا شفقت ادب غیرت

    انہیں جو بھول بیٹھا اس بشر کی بات کرتے ہیں

    گھرے ہیں مدتوں سے جو اندھیروں میں مصائب کے

    نہیں آتی کبھی جو اس سحر کی بات کرتے ہیں

    سبھی سے بزم میں ہنس کر ملی بے ساختہ لیکن

    نہیں ہم پر پڑی جو اس نظر کی بات کرتے ہیں

    ہوئے تقسیم جب سے دشمنی قائم بھی ہے لیکن

    ادھر والے ہماری ہم ادھر کی بات کرتے ہیں

    نہیں ہے رابطہ جن کا اثرؔ پیروں کے چھالوں سے

    گھروں سے جو نہیں نکلے سفر کی بات کرتے ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    پرمود شرما اثر

    پرمود شرما اثر

    RECITATIONS

    پرمود شرما اثر

    پرمود شرما اثر

    پرمود شرما اثر

    چھپا کر اپنی کرتوتیں ہنر کی بات کرتے ہیں پرمود شرما اثر

    مآخذ:

    • کتاب : Rang Sapno ke (Pg. 71)
    • Author : Pramod Sharma 'Asar'
    • مطبع : Amrit Parkashan (2016)
    • اشاعت : 2016

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY