چور تھے لوگ جو سنگینیٔ ہجرت سے یہاں

نبیل احمد نبیل

چور تھے لوگ جو سنگینیٔ ہجرت سے یہاں

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    چور تھے لوگ جو سنگینیٔ ہجرت سے یہاں

    سانس بھی آتا نہیں ان کو سہولت سے یہاں

    وہ کسی پھول کسی غنچے کے حق دار نہیں

    دشت گلزار بناتے ہیں جو محنت سے یہاں

    چوغا پہنایا گیا جھوٹ کا سچائی کو

    اور معانی لیے نفرت کے محبت سے یہاں

    ہم نے بنیاد رکھی زہر بجھے سجدوں کی

    تیغ کا کام لیا ہم نے عبادت سے یہاں

    ہاتھ حالات نے ڈالے ہیں گریبانوں میں

    زندگی کیسے گزارے کوئی عزت سے یہاں

    پیٹ پہ باندھا گیا صبر کا بھاری پتھر

    اور گزارا گیا ہر لمحہ مشقت سے یہاں

    صاحب منبر و محراب بھی کیا بھوکا ہے

    پیٹ کی آگ بجھاتا ہے شریعت سے یہاں

    سانس چبھتا رہا کانٹے کی طرح دل میں نبیلؔ

    جسم ڈھلتے رہے چھالوں میں اذیت سے یہاں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY