دامن تیرا مجھ سے چھوٹا ملنے کے حالات نہیں

ایلزبتھ کورین مونا

دامن تیرا مجھ سے چھوٹا ملنے کے حالات نہیں

ایلزبتھ کورین مونا

MORE BYایلزبتھ کورین مونا

    دامن تیرا مجھ سے چھوٹا ملنے کے حالات نہیں

    لیکن تجھ کو بھول سکوں میں ایسی بھی تو بات نہیں

    بدلے بدلے سے لگتے ہیں آج یہ تیرے تیور کیوں

    پہلے جیسے کیوں اب تیرے پیار کے وہ جذبات نہیں

    میرے ہاتھ کی ساری لکیریں الجھی الجھی لاکھ سہی

    ان میں مجھ کو تو مل جائے ہوگی میری مات نہیں

    تم سے بچھڑے عرصہ بیتا پھر بھی عکس ہے آنکھوں میں

    آئے نہ ہو تم خوابوں میں جو ایسی کوئی رات نہیں

    خوش قسمت ہیں لوگ وہ جن کو پیار کے بدلے پیار ملا

    اس دنیا میں ہر انساں کو حاصل یہ سوغات نہیں

    جاتے جاتے غم کی دولت تم نے بھر دی جھولی میں

    اب یہ زیست کا سرمایہ ہے معمولی خیرات نہیں

    درد بھری ہے یاد ماضی پھر بھی بس جی لیتے ہیں

    ہم نے جانا ہر منڈپ میں آتی ہے بارات نہیں

    چاہے بہار کا موسم ہو یا وصل کا کوئی عالم ہو

    بیت گئے جو پھر سے واپس آتے وہ لمحات نہیں

    جب جب تم یاد آئے موناؔ بھر آئیں میری آنکھیں

    آگ لگائے دل میں آنسو یہ کوئی برسات نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kahkashaan (Pg. 57)
    • Author : Elizabeth Kurian Mona
    • مطبع : Educational Publishing House (2013)
    • اشاعت : 2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY