دیر و حرم میں دشت و بیابان و باغ میں

ابراہیم ہوش

دیر و حرم میں دشت و بیابان و باغ میں

ابراہیم ہوش

MORE BYابراہیم ہوش

    دیر و حرم میں دشت و بیابان و باغ میں

    ڈھونڈو نہ مجھ کو میں ہوں خود اپنے سراغ میں

    ہاں اے اسیرو خیر سے ہو کس سراغ میں

    کھلتے ہیں اب تو پھول ہوا بست باغ میں

    اس برف زار میں بھی جلاتی ہی جاتی ہے

    وہ اک شبیہ جو ہے نہاں دل کے داغ میں

    رہتا ہے اب زمین پہ وہ آسماں پسند

    ہاں وہ خجل تھا جس سے خدا بھی دماغ میں

    ممکن نہیں کہ غار میں دل کے اتر سکے

    مانگے کی روشنی ہے تمہارے چراغ میں

    کیا قدر وہ کریں گے کسی خوش نوا کی ہوشؔ

    تفریق کر سکیں جو نہ قمری و زاغ میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY